URDU NEWS

کپاس کی اچھی اقسام کا بیج استعمال کرنے کی خصوصی ہدایت، ترجمان محکمہ زراعت پنجاب

محکمہ زراعت پنجاب کے مطابق کاشتکار کپاس کی کاشت کیلئے صرف منظور شدہ اقسام کا بیج استعمال کریں،نامنظور شدہ اور غیر قانونی بیج کے استعمال سے کپاس کی پیداوار میں نمایاں کمی ہو جاتی ہے۔کاشتکار کپاس کی بی ٹی اقسام کی کاشت یکم اپریل تا 31 مئی تک مکمل کر یں۔ امسال حکومت پنجاب کپاس کے کاشتکاروں کو کپاس کی منظور شدہ اقسام بی ایس15-،سی آئی ایم 663-،سی کے سی1-،آئی یوبی2013-،ایم این ایچ1020-،نیاب545-،نیاب878- اورنیاب کرن پر کاشتکاروں کو سبسڈی فراہم کی جارہی ہے۔
اس کے علاوہ یہ سبسڈی کسان کارڈ کے ذریعے بھی کاشتکاروں کو مہیا کی جارہی ہے۔کاشتکارکپاس کی کاشت یکم اپریل تا 31 مئی تک مکمل کریں۔کاشتکار بی ٹی اقسام کے ساتھ 10 فیصد رقبہ نان بی ٹی اقسام بھی کاشت کریں تاکہ حملہ آور سنڈیوں میں بی ٹی اقسام کے خلاف قوتِ مدافعت نہ پیدا ہو سکے۔
ترجمان نے مزید بتایا کہ کاشتکار تصدیق شدہ معیاری بیج پنجاب سیڈ کارپوریشن کے علاوہ رجسٹرڈ پرائیویٹ اداروں سے حاصل کیا جا سکتا ہے۔
پودوں کی پوری تعداد فی ایکڑ پیداوار میں اضافہ کی ضمانت ہے۔ کاشتکار اپریل کاشتہ کپاس میں پودے سے پودے کا فاصلہ 7انچ (17ہزار 500پودے فی ایکڑ) رکھیں۔کپاس کی بہتر پیداوار کیلئے ایسی زرخیز میرا زمین بہتر رہتی ہے جو تیاری کے بعد بھربھری اور دانے دار ہو جائے۔ اس میں نامیاتی مادہ کی مقدار بہتر ہو، پانی زیادہ جذب کرنے اور دیر تک وتر قائم رکھنے کی صلاحیت بھی موجود ہو۔
زمین کی نچلی سطح سخت نہ ہو تاکہ پودوں کی جڑوں کو نیچے اور اطراف میں پھیلنے میں دشواری نہ آئے۔ اس مقصد کے حصول کیلئے زمین میں ہر تین سال بعد ایک مرتبہ گہر ا ہل ضرور چلائیں اور پانی کے ضیاع کو کم کرنے اور فصل کی بہتر پیدر کے حصول کیلئے لیزر لینڈ لیولر سے زمین ہموار کریں تاکہ پودوں کی جڑیں آسانی سے گہرائی تک جاسکیں اور وتر دیر تک قائم رہے۔