URDU NEWS

حکومت ملک میں اسلامی مالیات اوراسلامی بینکاری کے فروغ کیلئے پرعزم ہے

مشیرخزانہ شوکت ترین کا 10ویں اسلامک فنانس ایکسپو وکانفرنس سے خطاب

وزیراعظم کے مشیربرائے خزانہ ومحصولات شوکت ترین نے کہاہے کہ حکومت ملک میں اسلامی مالیات اوراسلامی بینکاری کے فروغ کیلئے پرعزم ہے، اسلامی مالیات عالمی مالیاتی نظام کے تیزی سے ترقی کرنے والے شعبوں میں سے ایک ہے جوغیر مسلم ممالک سمیت دنیا بھر میں ترقی اوربہبود کیلئے مالی اعانت کا موثر ذریعہ ہے۔
انہوں نے یہ بات 10ویں اسلامک فنانس ایکسپو اینڈکانفرنس سے اپنے ورچوئل خطاب میں کہی جس کااہتمام دی پروفیشنل نیٹ ورک اورسی ای آئی ایف- آئی بی اے نے مل کرکیا تھا۔مشیر خزانہ نے اپنے خطاب میں اسلامی بینکاری کے اہم شعبوں پرتفصیل سے روشنی ڈالی اورکہاکہ اسلامی مالیات عالمی مالیاتی نظام کے تیزی سے ترقی کرنے والے شعبوں میں سے ایک ہے جونہ صرف مسلمان بلکہ غیر مسلم ممالک سمیت دنیا بھر میں ترقی اوربہبود کیلئے مالی وسائل اوراعانت فراہم کررہاہے۔ انہوں نے کہاکہ اسلامی فنانسنگ رسک شیئرنگ کی ترویج کرتے ہوئے مالیاتی شعبے کو حقیقی معیشت سے جوڑتا ہے، اور مالی شمولیت اور سماجی بہبود پر زور دیتا ہے۔
پائیدار اقتصادی ترقی، غربت میں کمی اور مشترکہ خوشحالی کو فروغ دینے میں اسلامی مالیات کا اہم کردار ہے۔ وزیراعظم کے مشیرنے کہاکہ زکوٰۃ، صدقات، وقف، اور قرضہ حسنہ کے ذریعے قائم معاشی نظام معاشرے میں دولت کی مؤثر تقسیم کو یقینی بناتا ہے۔انہوں نے کہاکہ اسلامی مالیات اور ماحولیاتی، سماجی اور گورننس مقاصد میں مماثلت ہے، رسک شیئرنگ اور سود سے گریز کی بنیادپرقائم اسلامی مالیات تخفیف غربت،مالیات تک رسائی بڑھانے، مالیاتی شعبے کو ترقی دینے اور استحکام اور لچک پیدا کرنے میں کلیدی کردارادا کرسکتاہے۔
وزیراعظم کے مشیرنے کہاکہ اسلامی مالیاتی صنعت کو ایک موثر اورفعال صنعت کے طورپرسامنے آنا چاہیے کیونکہ قرآن اور سنت نبوی صلی اللہ علیہ وسلم کے سکھائے گئے معاشی اصول آج دنیا کو درپیش بڑے معاشی مسائل کے حل کے لیے مفید رہنمائی فراہم کرتے ہیں۔ رسک شئیرنگ شریعت کا بنیادی فقہ اور عدل کا معیاری اصول ہے۔
وزیراعظم کے مشیرنے اپنے خطاب میں مالی شمولیت، سماجی انصاف اور وسائل کی تقسیم کے حوالہ سے اسلام کے بنیادی اصولوں پر روشنی ڈالی اورکہاکہ اسلامی بینکاری اور مالیات کو قدر پر مبنی ثالثی اور سماجی طور پر ذمہ دارانہ سرمایہ کاری پر زیادہ توجہ دیتے ہوئے مالیاتی نظام میں مثبت تبدیلی لانے کے لیے پیش قدمی کرنا چاہئیے۔ اسلامی مالیاتی آلات کے استعمال میں اختراعات ضروری ہے،گرین سکوک اسلامی بنیاد پر ہونے والے سرمایہ کاری کے آلے کی ایک منفرد مثال ہے۔
وزیراعظم کے مشیرنے اسلامی مالیات اوربینکاری کے فروغ کیلئے ماہرین، شریعہ اسکالرز اور پیشہ ور افراد کے درمیان تعاون کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے کہاکہ حکومت ملک میں اسلامی مالیاتی صنعت کی ترقی اور مضبوطی کے لیے پرعزم ہے۔ انہوں نے دی پروفیشنلز نیٹ ورک اور سنٹر آف ایکسی لینس ان اسلامک فنانس، انسٹی ٹیوٹ آف بزنس ایڈمنسٹریشن، کراچی کو نتیجہ خیز کانفرنس کے انعقاد پر مبارکباد دی۔